میانوالی میں نمل ڈیم کی جھیل سوکھنے لگی، زرخیز زمینیں بنجر ہونے کا خدشہ

postImg

عاصم سعید خان

loop

انگریزی میں پڑھیں

postImg

میانوالی میں نمل ڈیم کی جھیل سوکھنے لگی، زرخیز زمینیں بنجر ہونے کا خدشہ

عاصم سعید خان

loop

انگریزی میں پڑھیں

ساٹھ سالہ کاشتکار حبیب اللہ خان میانوالی کے گاؤں موسیٰ خیل کے رہائشی ہیں۔ وہ 20 کینال زرعی زمین کے مالک ہیں اور آٹھ افراد پر مشتمل ان کے خاندان کا ذریعہ آمدنی یہی زمین ہے جس پر وہ مختلف فصلیں اگاتے ہیں۔ ان کی زمین نمل کینال کے پانی سے سیراب ہوتی ہے لیکن اب انہیں یوں لگتا ہے کہ جیسے آںے والے برسوں میں انہیں یہ پانی نہیں ملے گا۔

 حبیب اللہ کا کہنا ہے کہ ربیع سیزن میں وہ گندم اور چنا جبکہ خریف میں کپاس کے علاوہ جوار، باجرہ اور گوار کاشت کرتے ہیں۔ پہلے انہیں دونوں سیزن میں فصل کے لیے پانی مل جاتا تھا لیکن اب ڈیم میں پانی بہت کم رہ گیا ہے۔

ان کا گاؤں میانوالی کےمشرق میں22 کلومیٹر اور نمل ڈیم سے12 کلومیٹر دور واقع ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ دس سال پہلے تک نمل نہر میں دو دو ماہ مسلسل پانی ملتا تھا ۔اب یہ دورانیہ کم ہوکر10 سے 12 دن رہ گیا ہے۔ اس بار تو گندم کوبھی مشکل سے پانی ملا۔

انہوں نے بتایا کہ ڈیم کی صفائی نہ ہونے سے اس میں پانی کی گنجائش بہت کم رہ گئی ہے۔ اگر صورتحال یہی رہی تو چند سال میں ان کی زمین بنجر ہو جائے گی۔

 محمد غازی بھی اسی گاؤں میں چار ایکڑ رقبے کے مالک ہیں۔وہ کہتے ہیں کہ نمل ڈیم کا پانی ان کی فصل تک پہنچ ہی نہیں پاتا۔اس لیے انہوں نے گندم اور کپاس کے بجائے صرف چنا اور باجرہ  کاشت کرنا شروع کر دیا ہے۔

نمل ڈیم کوہ نمک (سالٹ رینج) کے مغربی کنارے سے 35 کلومیٹر مشرق میں واقع ہے ۔یہ ڈیم برطانوی دور حکومت میں تعمیر ہوا۔ اس کی بنیاد اس وقت پنجاب کے لیفٹیننٹ گورنر مائیکل او ڈائر نے 1913 میں رکھی تھی۔

اس ڈیم کی اونچائی91  فٹ ہے۔ اس میں630 ملین کیوبک فٹ پانی جمع کرنے کی صلاحیت تھی۔ اس سے 12کلو میٹر طویل ایک نہر بھی نکالی گئی جسے 'نمل کینال'  کہا جاتا ہے۔

نمل کینال کا کمانڈ ایریا آٹھ ہزار753 ایکڑ تھا۔ اس میں سے پانچ ہزار897 ایکڑ زیر کاشت ہے۔آج 110 سال بعد نہر کی لمبائی سکڑ کرآٹھ کلو میٹر رہ گئی ہے۔

ڈسٹرکٹ آفیسر زراعت محمد فاروق اعظم بتاتے ہیں کہ15 برس پہلے یونین کونسل موسیٰ خیل کا ساڑھے چار ہزار ایکڑ رقبہ اسی نہر سے سیراب ہوتا تھا مگر اب تین ہزار ایکڑ زمین مشکل سے سیراب ہوتی ہے۔ اس عرصے میں یہاں کاشت30  فیصد متاثر ہوئی ہے۔

اربن سیکٹر پلاننگ اینڈ منیجمنٹ سروسز یونٹ کی 2022ء کی رپورٹ کے مطابق نمل ڈیم  کی جھیل کا رقبہ ساڑھے پانچ مربع کلومیٹر تھا جو کم ہو کر 1986ء میں 4.6 کلومیٹر رہ گیا اور پانی کی گنجائش 16 فیصد کم ہو گئی۔ 2018ء میں سٹوریج لیول 27 فیصد کم ہو گیا۔

2022ء میں جھیل کا رقبہ 2.2 مربع کلومیٹر رہ گیا اور ڈیم کی تہہ میں مٹی بھر جانے سے پانی کی گنجائش 57 فیصد کم ہو گئی۔

اب صورت حال یہ ہے کہ جھیل میں پانی کی سطح کم ہونے کے ساتھ علاقے میں واٹر ٹیبل بھی روز بروز گرتا جا رہا ہے۔

کاشت کارمحمد غفور یونین کونسل موسیٰ خیل میں اپنا آبائی رقبہ کاشت کرتے ہیں۔انہوں نےاپنی 25 ایکڑ زمین میں سے بارہ ایکڑ پر کپاس کاشت کر رکھی ہے اور باقی رقبہ پانی دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے بنجر چھوڑ دیا ہے ۔

وہ بتاتے ہیں کہ انہوں نے ایک سال پہلے آبپاشی کےلئے ٹیوب ویل لگوایا تھا۔690  فٹ گہرا بور ہوا۔60 لاکھ روپے خرچ ہوئےآئے مگر دو ماہ کے اندر ہی زیر زمین پانی کی سطح مزید کم ہو گئی اور ان کو ٹیوب ویل بند کرنا پڑا۔

سر کاری اعدادوشمار کے مطابق ضلع میانوالی کا کل قابل کاشت رقبہ 7لاکھ 55ہزار ایکڑ ہے۔ اس میں سے تین لاکھ 16ہزار 815 ایکڑ رقبہ زیر کاشت ہے ۔ صرف 33 ہزار آٹھ سو ایکڑ نہری پانی سے کاشت ہوتا ہے۔

سماجی کارکن امیر اللہ خان نے بتاتے ہیں کہ وہ ڈیم کی بحالی کے لیے پانچ بار  محکمہ انہار کو درخواستیں دے چکے ہیں۔2022 ء میں موسیٰ خیل اڈا پر کسانوں نے سڑک بلاک کر کے اس مسئلے پر احتجاج بھی کیا لیکن ان کی شنوائی نہیں ہوئی۔

وہ کہتے ہیں کہ جو تھوڑا بہت پانی آ رہا ہے وہ نہر میں بند باندھ کر بااثر افراد اپنی طرف موڑ لیتے ہیں۔ آگے پانی پہنچ ہی نہیں پاتا۔ اس لیے بہت سے کاشتکار کپاس کی فصل بوتے ہی نہیں۔

محمکہ انہار نمل کے ایس ڈی او محمد نوید کا کہنا ہے کہ نہر کی صفائی تو ہوتی ہے مگر ڈیم کی بحالی بہت بڑا منصوبہ ہے۔ پچھلی حکومت میں ڈیم کی صفائی کا منصوبہ زیر غور آیا تھا مگر کوئی پیشرفت نہیں ہو سکی۔

یہ بھی پڑھیں

postImg

چوبارہ برانچ پر سندھ کا اعتراض: 'تھل میں ایک نئی نہر بنانے سے ہمارے حصے کا پانی اور بھی کم ہو جائے گا'۔

اربن پلاننگ سروسز یونٹ نے نمل جھیل اور ڈیم کی بحالی  کے لیے 317.72 ملین روپے کا خام تخمینہ لگایا تھا۔ مگر اس معاملے پر کوئی پیش رفت نہیں ہو سکی۔

جھیل  کی تباہی سے نہ صرف زراعت بلکہ پوری وادی کا ماحول بدل رہا ہے اور چرند پرند اور نباتات بھی اس سے متاثر ہو رہے ہیں۔

 اسسٹنٹ ڈائریکٹر وائلڈ لائف محمد ابرار بتاتے ہیں کہ بھی یہاں پر غیرملکی مہمان پرندے بڑی تعداد میں آیا کرتے تھے۔ شکار پر پابندی  کے باوجود اب یہاں ان پرندوں کی تعداد بہت کم رہ گئی ہے۔اس کے علاوہ نباتات میں سونف، باتھو، کوڑتماں یہاں اب ناپید ہو چکے ہیں۔

 کوہ نمک کے مغربی جانب موسیٰ خیل سے یونین کونسل چھدرو تک پھیلی 12کلومیٹر لمبی اور کئی کلو میٹر چوڑی یہ پٹی کپاس کی پیداوار اورکوالٹی کے لیے مشہور رہی ہے ۔حافظ والا کاٹن فیکٹری کے سلیکٹر محمد قدیر خان بتاتے ہیں کہ یہاں کی کاٹن کا ریشہ اعلیٰ کوالٹی کا شمار ہوتا ہے لیکن نہر سکڑنے سے اب یوں لگتا ہے کہ اس علاقے سے کپاس کی فصل کا خاتمہ ہو جائے گا اور  زراعت سے وابستہ تقریباً چھ سو خاندان اپنا روزگار کھو بیٹھیں گے۔

تاریخ اشاعت 23 اگست 2023

آپ کو یہ رپورٹ کیسی لگی؟

author_image

عاصم سعید خان کا تعلق موسیٰ خیل ضلع میانوالی سے ہے۔ پولٹیکل سائنس میں ماسٹر کر رکھا ہے اور دو سال سے درس و تدریس سے وابستہ ہیں۔ علاقائی ، سماجی اور دیہی علاقوں کے مسائل میں دلچسپی رکھتے ہیں۔

thumb
سٹوری

بھنبھور: ہاتھی دانت کی صنعت کا سب سے بڑا مرکز

arrow

مزید پڑھیں

User Faceمحمد فیصل
thumb
سٹوری

وادی سندھ کی قدیم تہذیب کی خوش خوراکی: 'وہ لوگ گوشت کھاتے اور دودھ سے بنی اشیا استعمال کرتے تھے'

arrow

مزید پڑھیں

User Faceمحمد فیصل
thumb
سٹوری

میدان جنگ میں عید: ایک وزیرستانی کا عید کے لیے اپنے گھر جانے کا سفرنامہ

arrow

مزید پڑھیں

User Faceکلیم اللہ
thumb
سٹوری

پاکستان میں صنعتیں کلین انرجی پر چلانا کیوں مشکل ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceنعیم احمد

بلوچستان: عالمی مقابلے کے لیے منتخب باکسر سبزی منڈی میں مزدوری کر رہا ہے

thumb
سٹوری

گوڑانو ڈیم: تھر کول مائننگ کا پانی کیسے آبادیاں اور ارضیاتی ماحول تباہ کر رہا ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceجی آر جونیجو

جھنگ: سیم اور تھور ہماری زمینوں اور گھروں کو نگل گیا

thumb
سٹوری

نارنگ منڈی میں فرقہ واریت کی آگ کون بھڑکا رہا ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

سجاگ رپورٹ

پہاڑ نے بدلے میں قدرتی جنگل سے نواز دیا

thumb
سٹوری

'قراقرم ہائی وے پر بڑھتے حادثات کی وجہ کیا ہے، انسانی غلطی یا کچھ اور؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceعمر باچا

ضلع مہمند: "ہمارا وطن مشکلات کا وطن ہے"

thumb
سٹوری

زیر زمین کوئلے سے گیس اور بجلی بنانے کا منصوبہ، حقیقت یا افسانہ؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceجی آر جونیجو
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.