کیلے کی قیمتیں آسمان پر: سندھ میں کیلے کے باغوں پر کیا بیت رہی ہے؟

postImg

اشوک شرما

postImg

کیلے کی قیمتیں آسمان پر: سندھ میں کیلے کے باغوں پر کیا بیت رہی ہے؟

اشوک شرما

حیدر آباد کے ہیرا لال باگڑی برسوں سے کیلے کی تجارت کر رہے ہیں۔ وہ مقامی باغات اور منڈیوں سے کیلا خریدتے اور اسے ملک بھر میں بیچتے ہیں۔ ایک سال پہلے انہوں نے ٹنڈوجام میں بیس ایکڑ پر کیلے کے باغ کا ٹھیکہ لیا تھا جس سے انہیں فی ایکڑ دو سے ڈھائی ٹرک تک پیداوار حاصل ہوئی تھی۔ لیکن اس سال انہیں ہر ایکڑ سے بمشکل ایک ٹرک کیلا ہی حاصل ہو پایا ہے۔

پیداوار میں بھاری کمی ہیرا لال کے لئے بہت پریشان کن ہے۔ ان کو خدشہ ہے کہ اگر پیداوار میں کمی کا سلسلہ برقرار رہا تو انہیں اس ٹھیکے میں بھاری نقصان اٹھانا پڑ سکتا ہے۔

ہیرا لال کی طرح سندھ کے بہت سے علاقوں میں کاشت کار کیلے کی پیداوار میں کمی کی شکایت کر رہے ہیں۔

حیدرآباد کی سبزی منڈی کے بیوپاری احمد موٹانی کا کہنا ہے کہ منڈی میں کیلے کی رسد کم ہو گئی ہے اور انہیں کیلا مہنگا مل رہا ہے جسے وہ مہنگا بیچنے پر مجبور ہیں۔

سندھ آباد کار بورڈ کے ترجمان اور کیلے کے کاشت کار اسلم مری اس کی تصدیق کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ پیداوار میں کمی اور برآمد کی وجہ سے کیلا بہت مہنگا ہوگیا ہے۔ سندھ کی ہول سیل مارکیٹ میں فی من کیلے کی قیمت ساڑھے پانچ ہزار سے آٹھ ہزار روپے تک پہنچ چکی ہے جبکہ پرچون مارکیٹ میں کیلا 220  سے 250 روپے فی درجن میں فروخت ہو رہا ہے۔

سندھ ایگریکلچر یونیورسٹی ٹنڈو جام کے پروفیسر اسماعیل کمبھر نے بتایا ہے کہ ان دنوں سندھ کے کیلے میں فزیورم نامی فنگس آ گیا ہے جسے 'پاناما ولٹ' بھی کہا جاتا ہے اور مقامی لوگ اسے 'جلن والی بیماری' کہتے ہیں۔ بیرون ملک سے آنے والی کیلے کی نئی اقسام یہ بیماری پھیلا رہی ہیں اور اسے کسی سپرے سے ختم نہیں کیا جاسکتا۔ باغ کو اس بیماری سے بچانے کے لئے ضروری ہے کہ متاثرہ پودےکو ہی تلف کردیا جائے۔

سندھ میں کیلے کی فصل کو ہونے والا حالیہ نقصان 96-1995 میں 'بنانا بنچی ٹاپ وائرس' سے ہونے والی تباہی سے مشابہ ہے۔ اُس سال بھی کیلے کی پیداوار اسی طرح کم ہو گئی تھی۔

اسلم مری کا کہنا ہے کہ سندھ کے کیلے میں 'ٹی آر فور' بیماری بھی پائی گئی ہے جو ایک سال سے مختلف علاقوں میں ظاہر ہو رہی ہے۔ تاحال محکمہ زراعت نے اس بیماری کے خلاف کوئی ٹھوس اقدامات نہیں کئے۔

"کیلے کی 'گرینڈ نائن' نامی ورائٹی میں اس بیماری کا پھیلاؤ زیادہ ہے۔ ہم اس بیماری سے متاثرہ پودا جڑ سے نکال کر اس کے گڑھے میں آگ جلا دیتے ہیں تاکہ بیماری کے اثرات ختم ہو جائیں۔ اس کے علاوہ ہم کچھ نہیں کر سکتے۔''

پروفیسر کمبھر موسمی اثرات کو بھی کیلے کی پیداوار میں کمی کا اہم سبب قرار دیتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ گزشتہ سال آنے والی بارشوں اور سیلاب سے ایک طرف تو باغات تباہ ہو گئے اور دوسری جانب سیلاب سے پھوٹنے والی نت نئی بیماریوں نے بھی کیلے کی فصل کو بری طرح متاثر کی جس سے پیداوار میں 40 فیصد تک کمی آئی ہے۔

حیدرآباد چیمبر آف کامرس کے سینئر نائب صدر نجم الدین کے مطابق برآمد میں اضافہ بھی مقامی مارکیٹ میں کیلے کی رسد میں کمی کا ایک نمایاں سبب ہے کیونکہ اس مرتبہ ایران کو بھی بڑی مقدار میں کیلا برآمد کیا جا رہا ہے۔

وزارت تحفظ خوراک اور پاکستان زرعی تحقیقاتی کونسل کے مطابق ملک بھر میں کیلے کی مجموعی پیداوار لگ بھگ ایک لاکھ 55 ہزار ٹن ہے جس میں سے 87 فیصد صرف سندھ پیدا کرتا ہے۔ 22-2021 کے سیزن میں 67 ہزار ٹن سے زیادہ کیلا برآمد کیا گیا۔ اس میں 30 ہزار ٹن قازقستان، 28 ہزار ٹن افغانستان اور باقی متحدہ عرب امارات، برطانیہ، تاجکستان، ازبکستان اور رومانیہ کو بھیجا گیا۔ کیلے کی برآمدات میں سندھ کا حصہ 90 فیصد ہے۔

پروفیسر کمبھر کے مطابق پانی کی قلت، درجہ حرارت میں اضافہ، باغات میں زیراستعمال زرعی آلات کا دوسری جگہوں پر استعمال جیسے عوامل اس بیماری کے پھیلاؤ کا باعث بنتے ہیں۔

''ترقی یافتہ ممالک میں تو کاشت کار کسی شخص کو سکریننگ کے بغیر اپنے کھیت اور باغات میں داخل تک نہیں ہونے دیتے تاکہ ان کے ساتھ آنے والا کوئی کیڑا یا وائرس فصل کو نقصان نہ پہنچائے۔ لیکن ہمارے ہاں ایسا شعور نہیں پایا جاتا جس کی وجہ سے زرعی پیداوار کو بہت سا نقصان ہو رہا ہے۔''

تاریخ اشاعت 6 مئی 2023

آپ کو یہ رپورٹ کیسی لگی؟

author_image

اشوک شرما کا تعلق حیدر آباد، سندھ سے ہے۔ مختلف مین اسٹریم میڈیا چینلز سے وابستہ رہے ہیں۔

thumb
سٹوری

لاہور: اندرون شہر کے کئی علاقوں میں سولر پینلز لگانا مشکل، حل کیا ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

آصف محمود

ضلع خیبر: ڈوبتی ہوئی زراعت کو سولر سسٹم کا سہارا

لاہور کی یونیورسٹیاں، فضائی آلودگی کے خلاف متحد

thumb
سٹوری

شانگلہ میں سیاح کیوں نہیں جاتے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceعمر باچا

آزاد کشمیر: میرپور میں ماحول دوست عوامی گاڑی چل پڑی

thumb
سٹوری

شمسی توانائی، قبائلی ضلع خیبر کے لوگوں کی تکالیف کیسے کم کررہی ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی

بجلی آئے نہ آئے، ہسپتال کھلا ہے

thumb
سٹوری

کاسا-1000: کرغزستان اور تاجکستان سے بجلی لانے والی ٹرانسمشن لائن کا کام کب شروع ہو گا؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی

لیپ آف فیتھ: اقلیتی رہنماؤں کے ساتھ پوڈ کاسٹ سیریز- ڈاکٹر یعقوب بنگش

کل مالی تھا آج ایم فل ہوں

چلتے پھرتے سولر سسٹم بھکر پہنچ گئے

thumb
سٹوری

خیبر پختونخوا میں انصاف کے متبادل نظام کی کمیٹیاں، ایک بھی خاتون شامل نہیں

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.