جنوبی وزیرستان میں ماحول کی خوبصورتی اور ارضی زرخیزی ماند پڑنے کا خطرہ

postImg

شہریار محسود

loop

انگریزی میں پڑھیں

postImg

جنوبی وزیرستان میں ماحول کی خوبصورتی اور ارضی زرخیزی ماند پڑنے کا خطرہ

شہریار محسود

loop

انگریزی میں پڑھیں

پاکستان میں کم لوگ ہی جانتے ہیں کہ 'بری خبروں' کی وجہ سے تذکروں میں رہنے والا وزیرستان کا خطہ خیبر پختونخوا کے زرخیز ترین علاقوں میں شمار ہوتا ہے۔ سالانہ اربوں روپے کے چلغوزے پیدا کرنے والا یہ علاقہ شمالی اور جنوبی وزیرستان میں منقسم ہے۔ جنوبی وزیرستان قبائلی علاقوں کے کل رقبے کا چالیس فیصد ہے اور یہاں نئی انتظامی تقسیم کے تحت اسے دو اضلاع میں تقسیم کر دیا گیا ہے جس میں محسود قبائل کا علاقہ اپر جنوبی وزیرستان جبکہ وزیر قبائل کا علاقہ لوئر جنوبی وزیرستان کہلاتا ہے۔

اس خطے میں لوئر وزیرستان کے علاقے وانا کے لوگوں کی بڑی تعداد زرعی سرگرمیوں اور سبزیوں، پھلوں کی کاشت سے منسلک ہے اور مقامی طور پر کہا جاتا ہے کہ وزیرستان میں زرعی انقلاب انہی کی بدولت آیا ہے۔ وانا اور ملحقہ علاقوں کی پیداوار پاکستان بھر کی سبزیوں اور پھلوں کی منڈیوں تک پہنچتی ہے۔

خیبرپختونخوا حکومت کے مطابق قبائلی اضلاع سے مارکیٹ میں پہنچنے والے 73 فیصد پھل جنوبی وزیرستان سے آتے ہیں۔ حالیہ انتظامی تقسیم کے تناظر میں دیکھا جائے تو  اس میں سے 71 فیصد پھل وانا سے مارکیٹ میں پہنچ رہا ہے۔

پھلوں کے کاروبار سے وابستہ رفیق الدین وزیر کہتے ہیں کہ وانا کی مٹی قدرت کا تحفہ ہے یہاں دوسرے علاقوں کی نسبت پودے کی نشوونما بیس سے پچیس فیصد تیزی سے ہوتی ہے لیکن گزشتہ چند برس سے وانا میں زیر زمین پانی کی سطح خطرناک حد تک کم ہو رہی ہے جس کی وجہ سے یہاں کی زراعت متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

وانا سے تعلق رکھنے والے انجینئر سیف الرحمن وزیر کے مطابق پانی کی سطح ہر سال 30 سے 40 فٹ نیچے جارہی ہے جو آنے والے وقتوں کیلئے تباہی کا پیغام ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ وانا میں 10 سے 20 ہزار کے درمیان سولر ٹیوب ویل چل رہے ہیں جو کہ پانی کی تیزی سے کم ہوتی سطح کے پیش نظر نہایت خطرناک بات ہے۔

بجلی کی عدم دستیابی کے باوجود ٹیوب ویلوں کی اتنی بڑی تعداد کے بارے میں سیف الرحمٰن وزیر کا کہنا ہے کہ وانا کی ساڑھے چار لاکھ کی آبادی میں تین لاکھ سے زیادہ افراد نے باغات لگا رکھے ہیں، ان میں سے اکثر لوگ ایسے ہیں جن کے کئی کئی باغات ہیں، یہ سارے باغات ٹیوب ویل کے پانی پر انحصار کرتے ہیں جنہیں سولر انرجی سے چلایا جاتا ہے۔

"سولر انرجی کے باعث بجلی کے بلوں کا خرچہ تو ہے نہیں، سارا دن موٹریں چلتی ہیں، اس طرح زمین سے بے دریغ نکالے جانے والے پانی کی مقدار ضرورت سے بھی زیادہ ہوتی ہے اور اس کا بڑا حصہ ضائع ہو جاتا ہے۔"

سیف الرحمٰن کے مطابق اس وقت وانا یا مجموعی طور پر ضلع لوئر جنوبی وزیرستان میں ہنگامی بنیادوں پر چھوٹے ڈیم بنانے کی ضرورت ہے، بصورت دیگر آنے والے سالوں میں پانی کی ایسی قلت پیدا ہو گی کہ لوگوں کو علاقہ چھوڑنا پڑ سکتا ہے۔

وانا میں پانی کی سطح میں کمی کے بارے میں آگاہی پھیلانے اور اس مسئلے پر قابو پانے کے لیے کئی سال سے متحرک سماجی تنظیم وانا ویلفیئر ایسوسی ایشن کے کرتا دھرتا اس بارے میں لوگوں کو خبردار کرتی آئی ہے۔ سابق وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان تنظیم کی درخواست پر اس مسئلے کے جائزے کیلئے پچاس کروڑ روپے کی منظوری دی جو کہ سالانہ ترقیاتی پروگرام (اے ڈی پی) کا حصۃ تھی۔ لیکن تحریک انصاف کی صوبائی حکومت اس اجتماعی مسئلے کے جامع حل پر قائم نہ رہ سکی اور ہر گزرتے دن کے ساتھ فیزیبلٹی رپورٹ کے مطابق حل کے بجائے کئی چھوٹے منصوبوں میں بٹ گئی۔

سینئر صحافی دلاور خان وزیر وانا میں پانی کے مسئلے کی نشاندہی اور حل کی کوششوں میں کافی عرصے سے سرگرم ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ پانی کی سطح میں کمی سے وانا کی خوبصورتی اور ذرخیزی بھی خطرے میں پڑ گئی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ وانا میں چھوٹے ڈیم بنانے کی ضرورت ہے۔ آئندہ چند روز میں ایک تکنیکی ٹیم وانا کا دورہ کر رہی ہے جو ایسے ڈیم بنانے کے لیے موزوں جگہوں کا جائزہ لے گی۔

یہ بھی پڑھیں

postImg

راجن پور میں زیرزمین پانی میں کیمیائی مادوں کی مقدار خطرناک حد سے تجاوز کر گئی، شہریوں کی صحت اور زندگی کو خطرہ

صورتحال کی سنگینی کے پیش نظر گزشتہ دنوں وانا میں احمد زئی وزیر  قبیلے کے نو بڑے ذیلی قبائل پر مشتمل جرگے کا انعقاد کیا گیا جس میں اہم علاقائی مشران نے شرکت کی۔

اس جرگے میں شامل تمام قبائل کے نمائندے اس مسئلے کے حل کیلئے پرعزم تھےجنہوں نے مشترکہ اعلان میں کہا کہ سمال ڈیم بننے کی صورت میں قبائلی علاقوں میں مروجہ معاوضہ (قومی کمیشن) بھی نہیں لیا جائے گا جس کا مطلب یہ ہے کہ علاقے کے لوگ اس خطرناک مسئلے کے حل کیلئے باہم متفق ہیں۔

وانا ویلفیئر ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری جلال وزیر نے اس بارے میں بتایا کہ پانی کا مسئلہ ان کے علاقے کے مستقبل کیلئے اہم ہے اور تکنیکی سروے کے مطابق زیرزمین آبی سطح میں کمی سے ٹیوب ویلز کا پانی بھی خشک ہوتا جا رہا ہے۔ علاقے کے لوگوں، مشران اور نوجوانوں کی کوشش ہے کہ اس مسئلے کو قومی اتفاقِ رائے سے حل کیا جائے اور اس مقصد کا حصول ان کے لئے بڑی کامیابی ہو گی۔

تاریخ اشاعت 19 اکتوبر 2023

آپ کو یہ رپورٹ کیسی لگی؟

author_image

شہریار محسود 2006/007 سے بد امنی سے متاثرہ ضلع جنوبی وزیرستان سے صحافت کر رہے ہیں اور مقامی اخبارات کے ساتھ ساتھ ڈیجیٹل پلیٹ فارمز پر لکھتے آرہے ہیں۔

thumb
سٹوری

صوابی کی دونوں سرکاری یونیورسٹیوں میں ماس کمونیکیشن کے شعبے کیوں بند ہو گئے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceوسیم خٹک

ہزارہ برادری: بزرگوں کے "باکولو" گروپ کی سترہ سالہ محنت رنگ لے آئی

کوہستان: لڑکیوں میں شرح خواندگی صرف 3 فیصد

thumb
سٹوری

خیبر پختونخوا: قبائلی اضلاع کے تجارتی مراکز اور سولر منی گرڈ منصوبہ، اتنی تاخیر کیوں؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی

چمن: بچے ابھی تک کتابوں کے منتظر ہیں

thumb
سٹوری

شانگلہ کے پہاڑوں میں کان کنی سے آبادی کے لیے کیا خطرات ہیں؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceعمر باچا
thumb
سٹوری

شمالی وزیرستان میں تباہ کیے جانے والے سکول کی کہانی مختلف کیوں ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceکلیم اللہ
thumb
سٹوری

ٹنڈو الہیار میں خسرہ سے ہوئی ہلاکتوں کا ذمہ دار کون ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاشفاق لغاری

آزاد کشمیر: احتجاج ختم ہو گیا مگر! مرنے والوں کو انصاف کون دے گا؟

ملتان، تھری وہیلر پائلٹ پراجیکٹ: بجلی سے چلنے والے 20 رکشوں پر مشتمل ایک کامیاب منصوبہ

thumb
سٹوری

موسموں کے بدلتے تیور کیا رنگ دکھائیں گے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceزبیر خان

آنکھوں میں بینائی نہیں مگر خواب ضرور ہیں

Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.