میانوالی میں چند منٹ کی ژالہ باری نے کپاس کی فصل تباہ کر دی، چھوٹے کسان حکومت سے مدد کےطلب گار

postImg

عاصم سعید خان

loop

انگریزی میں پڑھیں

postImg

میانوالی میں چند منٹ کی ژالہ باری نے کپاس کی فصل تباہ کر دی، چھوٹے کسان حکومت سے مدد کےطلب گار

عاصم سعید خان

loop

انگریزی میں پڑھیں

محمد طاہر خان میانوالی سے 25 کلومیٹر دور مشرق کی جانب ڈیرہ نورنگ خیلانوالہ میں رہتے ہیں۔ یہ گاؤں کوہستان نمک کے دامن میں چھدرو نامی علاقے میں واقع ہے۔ طاہر کا خاندان پانچ افراد پر مشتمل ہے اور وہ اپنی آبائی اراضی پر کاشت کاری کرتے ہیں۔ امسال انہوں ںے بارہ ایکڑ زمین پر کپاس کی فصل اگائی جو تیار ہو گئی تو 29 ستمبر کو ہونے والی چند منٹ کی ژالہ باری نے اسے اجاڑ کر رکھ دیا۔

طاہر نے بتایا کہ اس صبح آسمان پر بادل چھائے ہوئے تھے جنہیں دیکھ کر وہ خوش ہو گئے کہ اگر آج بارش ہو گئی تو ان کی فصل کو فائدہ ہو گا اور پانی کا خرچہ بھی بچ جائے گا۔ مگر بارش کے ساتھ غیرمعمولی ژالہ باری بھی شروع ہو گئی۔ کچھ ہی دیر کے بعد موسم صاف ہو گیا اور جب وہ اپنے کھیتوں میں پہنچے تو ان کی فصل پوری طرح تباہ ہو چکی تھی۔

اسی گاؤں کے رہائشی یوسف خان نے چھ ایکڑ پر کپاس کاشت کر رکھی تھی اور ان کی فصل بھی چنائی کے لیے تیار تھی جو ژالہ باری سے بری طرح متاثر ہوئی۔

ان کا کہنا ہے کہ وہ فی ایکڑ زمین پر ایک لاکھ چالیس ہزار روپے تک خرچ کر چکے تھے اور انہیں امید تھی کہ وہ 17 سے 20 من فی ایکڑ تک پیداوار حاصل کر لیں گے لیکن اب وہ بمشکل چار سے چھ من کپاس ہی اٹھا پائیں گے۔

وہ بتاتے ہیں کہ مہنگائی کی وجہ سے کھاد، سپرے، پانی اور ہل وغیرہ کے ریٹ میں بہت زیادہ اضافہ ہو گیا ہے۔ ان اخراجات کے لیے انہوں نے رقم ادھار لے رکھی تھی مگر اب اس تباہی کے بعد ان میں گندم کاشت کرنے کی ہمت نہیں کیونکہ اس سے ان کی خرچ کی ہوئی رقم بھی وصول نہیں ہو گی۔ یوسف خان پریشان ہیں کہ حکومت کا مقررہ ریٹ نہایت کم ہے اور اب آڑھتی اس سے بھی کم ریٹ دے رہے ہیں۔

ان کا اور ژالہ باری سے متاثرہ دیگر چھوٹے کسانوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان کےنقصان کا ازالہ کرنے کے اقدامات کرے کیونکہ وہ اس فصل پر جو سرمایہ کاری کر چکے تھے اب اس کی واپسی کی امید نہیں رہی۔

چھدرو کے باسیوں کا ذریعہ روزگار زراعت کے ساتھ جڑا ہوا ہے۔ یہاں کے کاشتکار اپنی فصلوں کو ٹیوب ویل کے پانی سے سیراب کرتے ہیں۔ یہاں سال میں گندم اور کپاس کی صورت میں دو فصلیں اگائی جاتی ہیں۔ اس علاقے کے لوگ زیادہ تر کپاس کو پچھیتی کاشت کرتے ہیں جس کی وجہ سے ان کی چنائی اکتوبر کے پہلے ہفتے میں شروع ہو جاتی ہے مگر موسمیاتی تبدیلیاں اب ان کی کاشت کو بہت زیادہ متاثر کرنے لگی ہیں۔

کاشتکاروں کی تنظیم 'کسان اتحاد' کے نائب صدر نواز خان کا کہنا ہے کہ ژالہ باری سے تین سے چار ہزار ایکڑ پر کپاس کی تیار فصل کو نقصان پہنچا ہے۔ کسان پہلے ہی ٹیوب ویل کے بل اور کپاس کے کم سرکاری ریٹ کی وجہ سے پریشان ہیں اور ژالہ باری نے ان کی پریشانی مزید بڑھا دی ہے۔ اس نقصان کے بعد متاثرہ کسانوں کا مطالبہ ہے کہ ان کے دو ماہ کے بجلی کے بل معاف کیے جائیں اور کپاس کے ریٹ کو بڑھایا جائے تاکہ وہ بچ جانے والی فصل فروخت کر کے گندم کی فصل کاشت کر سکیں۔

میانوالی کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر زراعت محمد طارق خان بتاتے ہیں کہ انہوں نے ژالہ باری سے متاثرہ فصلوں کا دورہ کیا ہے اور نقصان کا تخمینہ لگانے کے لیے ایک ٹیم تشکیل دی ہے جو کہ متاثرہ کاشتکاروں کو معلومات کی فراہمی کے ساتھ ان کے نقصان کی تفصیلات بھی جمع کرے گی۔ یہ ٹیم اپنی رپورٹ حکومت کو دے گی جس کی روشنی میں کسانوں کو معاوضہ دینے کے معاملے پر فیصلہ کیا جائے گا۔

اسی گاؤں کی چالیس سالہ نذیراں بی بی چار بچوں کی ماں ہیں۔ کپاس کے  موسم میں وہ اور ان کی بڑی بیٹی چنائی کا کام کرتی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ اپنے علاقے سے باہر کپاس چننے نہیں جاتیں بلکہ صرف نزدیکی علاقوں میں ہی کام کرتی ہیں۔ کپاس کا موسم ان کے لیے بہت فائدہ مند ثابت ہوتا ہے کیونکہ اس سے ان کو کچھ فاضل رقم کمانے کا موقع ملتا ہے۔ مگر حالیہ ژالہ باری نے ان کی یہ امید ختم کر دی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

postImg

راجن پور میں کپاس پر سفید مکھی کا حملہ: حکومتی اقدامات فصل کو بچانے میں کتنے کارگر ہوں گے؟

وہ بتاتی ہیں کہ کپاس کے موسم میں عموماً ایک خاتون بیس سے پچیس ہزار روپے تک کپاس چن لیتی ہے جس سے زیادہ تر خواتین اپنی بیٹیوں کے جہیز کے لیے کچھ نا کچھ خرید لیتی ہیں۔ اس سال فی کلو کپاس چنائی کے ریٹ میں بھی اضافہ ہوا مگر اب چونکہ کاشتکاروں کا بہت نقصان ہو چکا ہے اس لیے ان کو کسی نے کپاس کی چنائی کے لیے بھی نہیں کہا اور کسانوں کے گھر والے خود ہی کپاس چن رہے ہیں۔

محکمہ زراعت کے مطابق میانوالی میں رواں سال ایک لاکھ 54 ہزار 490 ایکڑ رقبے پر کپاس کی فصل کاشت کی گئی ہے۔ پاکستان میں پچھلے سال جنوبی پنجاب اور سندھ میں سیلاب کی وجہ سے پیداوار 4.8 ملین بیلز رہیں تھیں جو تاریخ کی سب سے کم پیداوار تھی لیکن اس بار پاکستان میں 12 ملین  بیلز ہونے کی امید ہے۔

تاریخ اشاعت 19 اکتوبر 2023

آپ کو یہ رپورٹ کیسی لگی؟

author_image

عاصم سعید خان کا تعلق موسیٰ خیل ضلع میانوالی سے ہے۔ پولٹیکل سائنس میں ماسٹر کر رکھا ہے اور دو سال سے درس و تدریس سے وابستہ ہیں۔ علاقائی ، سماجی اور دیہی علاقوں کے مسائل میں دلچسپی رکھتے ہیں۔

thumb
سٹوری

لاہور: اندرون شہر کے کئی علاقوں میں سولر پینلز لگانا مشکل، حل کیا ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

آصف محمود

ضلع خیبر: ڈوبتی ہوئی زراعت کو سولر سسٹم کا سہارا

لاہور کی یونیورسٹیاں، فضائی آلودگی کے خلاف متحد

thumb
سٹوری

شانگلہ میں سیاح کیوں نہیں جاتے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceعمر باچا

آزاد کشمیر: میرپور میں ماحول دوست عوامی گاڑی چل پڑی

thumb
سٹوری

شمسی توانائی، قبائلی ضلع خیبر کے لوگوں کی تکالیف کیسے کم کررہی ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی

بجلی آئے نہ آئے، ہسپتال کھلا ہے

thumb
سٹوری

کاسا-1000: کرغزستان اور تاجکستان سے بجلی لانے والی ٹرانسمشن لائن کا کام کب شروع ہو گا؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی

لیپ آف فیتھ: اقلیتی رہنماؤں کے ساتھ پوڈ کاسٹ سیریز- ڈاکٹر یعقوب بنگش

کل مالی تھا آج ایم فل ہوں

چلتے پھرتے سولر سسٹم بھکر پہنچ گئے

thumb
سٹوری

خیبر پختونخوا میں انصاف کے متبادل نظام کی کمیٹیاں، ایک بھی خاتون شامل نہیں

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.