بلوچستان کے باغبان سیب کی کاشت ترک کر کے سبزیاں کیوں اگا رہے ہیں؟

postImg

عبدالرحمن خلجی

loop

انگریزی میں پڑھیں

postImg

بلوچستان کے باغبان سیب کی کاشت ترک کر کے سبزیاں کیوں اگا رہے ہیں؟

عبدالرحمن خلجی

loop

انگریزی میں پڑھیں

بلوچستان کے ضلع زیارت کی تحصیل سنجاوی جانے والوں کو قدرتی نظاروں کے ساتھ کئی طرح کے پھلوں کے باغات دیکھنے کا موقع بھی ملتا ہے۔ سنجاوی کی معیشت میں سیب کے باغات کو مرکزی حیثیت حاصل ہے۔ یہاں گاجا، تور کولو، شین کولو، قمرائی اور گولڈن کے علاوہ بھی سیب کی اقسام کاشت ہوتی ہیں۔ البتہ کچھ عرصے سے سیبوں کے باغبان مشکل میں ہیں۔

مقامی باغبان محمد ہاشم کے مطابق ان کے باغ میں ایک ایکڑ رقبے پر سیب کے درخت تھے۔ بدقسمتی سے تمام درخت خشک ہو گئے ہیں۔ اب وہ کم مدت میں تیار ہونے والی فصلیں کاشت کرنے پر مجبور ہیں۔

ایک اور کاشت کار ملک جمعہ خان دمڑ کا کہنا ہے کہ سنجاوی کے مکلور، ریگوڑہ، گیواڑی، نسک اور چلیز نامی علاقوں میں سیب کے تقریباً آدھے درخت اکھاڑ دیے گئے ہیں۔

"چند سال پہلے خشک سالی زرعی شعبے کی زبوں حالی کی بڑی وجہ تھی۔ اب بجلی کی 12 سے 15 گھنٹے طویل لوڈشیڈنگ ہونے لگی ہے۔

باغبانوں اور کاشت کاروں کا انحصار بجلی کے ٹیوب ویل پر زیادہ ہے کیونکہ شمسی ٹیوب ویل بیشتر کاشت کاروں کی قوت خرید سے باہر ہیں۔ علاوہ ازیں زیادہ استعمال ہونے والی کھاد ڈی اے پی کی بوری کی قیمت چند برس میں بہت بڑھ گئی ہے جبکہ مختلف اقسام کی دیگر کھاد کی قیمتوں میں بھی 60 فیصد کے قریب اضافہ ہوا ہے۔"

ان کا کہنا ہےکہ یہی وجہ ہے کہ یہاں کے کاشت کاروں نے مہنگائی، بجلی کی لوڈشیڈنگ اور کھاد کی قیمتوں میں اضافے کے سبب سیب کے باغات ختم کر کے سبزیاں اگانا شروع کر دی ہیں تاکہ کم مدت میں فصل اگا کر روزی کما سکیں۔

حکومت کی عدم توجہی کا ذکر کرتے ہوئے ان کا کہنا ہے کہ زرعی اداروں کے اہلکار یہاں آتے ہیں، مسائل حل کرنے کا وعدہ کرتے ہیں اور غائب ہو جاتے ہیں۔

سنجاوی کے شہری علاقے میں باغبانی کرنے والے حسن شاہ سنجاوی کہتے ہیں کہ ان کا دو ایکڑ پر مشتمل سیب کا باغ چند سال پہلے خشک سالی سے تباہ ہو گیا۔ اب اس زمین پر مارکیٹ بنائی ہے جس سے کاشت کاری کی نسبت سے زیادہ منافع ہوتا ہے۔

"اگر پیداوار اچھی نہ ہو اور مارکیٹ میں ریٹ بھی اچھا نہ ملے تو کم رقبے والا زمین دار نقصان برداشت نہیں کر سکتا۔ اس کے لیے کم مدت میں اگنے والی فصلیں مثلاً مٹر، ٹماٹر، آلو، دھنیا اور لہسن فائدہ مند ثابت ہوتے ہیں۔"

ان کے باغ میں کام کرنے والے مزدور سمیع اللہ نے بتایا کہ باغ مالکان کو اگر فائدہ نہ ہو تو انھیں اپنی مزدوری مشکل سے ملتی ہے۔ ان کے مطابق "پنجاب اور سندھ سے آئے ہوئے مزدور کم اجرت پر کام کرتے ہیں جس کے باعث مقامی مزدوروں کی مانگ کم ہو گئی ہے۔"

 درخت بیمار بھی ہو رہے ہیں۔ مقامی کاشت کار راز محمد کاکڑ کہتے ہیں کہ ان کے علاقے میں سیب کے درختوں کی جڑیں خشک ہو جاتی ہیں۔ اس کے بعد اس زمین پر کوئی دوسرا پھل دار درخت اگانا مشکل ہوتا ہے۔

بلوچستان پاکستان میں سب سے زیادہ سیب پیدا کرنے والا صوبہ ہے۔ اس پھل کی مجموعی ملکی پیداوار میں صوبے کا حصہ 94 فیصد ہے۔ بلوچستان میں ضلع قلعہ سیف اللہ میں صوبے کے مجموعی سیب کا 55 فیصد پیدا ہوتا ہے۔پشین، ژوب، قلعہ عبداللہ اور زیارت بھی سیب کی پیداوار کے لیے مشہور ہیں۔

کاشت کاروں کے مطابق پچھلے چند برس میں سیب کے زیر کاشت رقبے میں بہت زیادہ کمی ہوئی ہے۔ بلوچستان کے محکمہ زراعت کی ایک رپورٹ بھی اس کی تصدیق کرتی ہے جس کے مطابق صوبے میں 2011ء سے 2021ء تک سیب کے باغات میں 30 فیصد تک کمی ہوئی ہے۔

2011ء میں صوبہ بلوچستان میں دو لاکھ 52 ہزار 501 ایکڑ رقبے پر سیب کے باغات تھے جو 2021ء تک کم ہو کر ایک لاکھ 77 ہزار 635 ایکڑ رہ گئے۔ نیز صوبے کے سب سے زیادہ سیب پیدا کرنے والے ضلع قلعہ سیف اللہ میں پچھلے 10 برسوں میں اس پھل کا زیر کاشت رقبہ 35 فیصد کم ہوا ہے۔

تاہم کسانوں کا کہنا ہے کہ یہ اعداد و شمار 2021ء میں آنے والے سیلاب سے پہلے کے ہیں، سیلاب سے کئی اضلاع میں سیبوں کے باغات کو بہت زیادہ نقصان پہنچا تھا جس سے زیرکاشت رقبہ مزید کم ہوا ہے۔

سیب کی طلب پوری کرنے کے لیے درآمدات کے اعداد بھی یہی بتاتے ہیں کہ زیر کاشت رقبے میں کمی ہونے کے ساتھ پاکستان کو اپنی ضرورت پوری کرنے کے لیے بیرون ملک سے زیادہ مقدار میں سیب منگوانے کی ضرورت پڑ رہی ہے۔

2011ء میں 41 کروڑ پانچ لاکھ روپے کے سیب ملک میں درآمد کیے گئے جبکہ 2020ء میں یہ رقم بڑھ کرچھ ارب 22 کروڑ ہو گئی۔ 2021ء میں چار ارب 88 کروڑ روپے کے سیب درآمد کرنا پڑے۔

زیارت میں زراعت سے وابستہ عبدالصبور نے بتایا کہ زمین داروں کو غیر معیاری زرعی ادویات اور ان کے استعمال کے بارے میں آگاہی کی کمی ہے۔ ان کا بلا ضرورت اور بے وقت استعمال نقصان دہ ثابت ہوتا ہے۔ ڈی اے پی کھاد کی قیمت زیادہ ہے اس لیے زمین دار سستی اور غیر معیاری کھاد بھی استعمال کر رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

postImg

سیلاب نے کان مہترزئی میں سیب کے ہزاروں درخت بانجھ کر دیے: زمیندار زندگی دوبارہ شروع کرنے کے لیے حکومتی سہارے کے منتظر۔

ان کے مطابق سیب کی خالی پیٹی کی قیمت 70 سے 100 روپے ہے جبکہ بھرائی کے لیے کاغذ، بھوسہ، کیلیں اور دیگر سامان کے ساتھ یہ قیمت دو سو روپے تک پہنچ جاتی ہے۔ منڈی اور مزدوروں کے اخراجات کے علاوہ فارم سے منڈی تک مال پہنچانے کے اخراجات تقریباً دو سو روپے فی کریٹ ہیں۔ سب ملا کر منڈی تک ایک پیٹی سیب تقریباً 400 روپے میں پڑ جاتا ہے۔ کبھی کبھار اچھا ریٹ نہ ملنے پر کاشت کار نقصان اٹھا لیتا ہے لیکن ہر بار نہیں۔

"سنجاوی سے ملتان، فیصل آباد اور لاہور تک ایک ٹرک پہلے سے کئی گنا زیادہ کرایہ لے رہا ہے، جبکہ سیب کی قیمت وہی ہے جو آج سے آٹھ سال پہلے تھی۔"

ایک فروٹ ایجنٹ و ٹرانسپورٹ کمپنی کے مالک نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ پنجاب سے تعلق رکھنے والے آڑھتی ہمیں قبل از وقت معقول رقم دیتے ہیں تاکہ ہم ان باغبانوں کو دیں اور پھل تیار ہونے پر واپس لیں۔ اگر باغبان پھل نہ دے تو ہم مشکل میں پڑ جاتے ہیں۔ ان کے مطابق " باغبانوں کی مشکلات سے وہ، کمپنی ایجنٹ اور آڑھتی تینوں متاثر ہوتےہیں۔"

تاریخ اشاعت 20 اکتوبر 2023

آپ کو یہ رپورٹ کیسی لگی؟

author_image

عبدالرحمن خلجی کا تعلق زیارت، بلوچستان سے ہے۔ عبدالرحمن نے بلوچستان یونیورسٹی کوئٹہ سے صحافت میں ماسٹر ڈگری حاصل کی ہوئی ہے۔ گزشتہ دو سال سے عملی صحافت سے وابستہ ہیں۔

thumb
سٹوری

طالبان حکومت برسر اقتدار آنے کے بعد پاکستان آنے والی افغان مہاجر خواتین پر کیا بیت رہی ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی
thumb
سٹوری

صوابی کی دونوں سرکاری یونیورسٹیوں میں ماس کمونیکیشن کے شعبے کیوں بند ہو گئے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceوسیم خٹک

ہزارہ برادری: بزرگوں کے "باکولو" گروپ کی سترہ سالہ محنت رنگ لے آئی

thumb
سٹوری

خیبر پختونخوا: قبائلی اضلاع کے تجارتی مراکز اور سولر منی گرڈ منصوبہ، اتنی تاخیر کیوں؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاسلام گل آفریدی

کوہستان: لڑکیوں میں شرح خواندگی صرف 3 فیصد

چمن: بچے ابھی تک کتابوں کے منتظر ہیں

thumb
سٹوری

شانگلہ کے پہاڑوں میں کان کنی سے آبادی کے لیے کیا خطرات ہیں؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceعمر باچا
thumb
سٹوری

شمالی وزیرستان میں تباہ کیے جانے والے سکول کی کہانی مختلف کیوں ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceکلیم اللہ

آزاد کشمیر: احتجاج ختم ہو گیا مگر! مرنے والوں کو انصاف کون دے گا؟

thumb
سٹوری

ٹنڈو الہیار میں خسرہ سے ہوئی ہلاکتوں کا ذمہ دار کون ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceاشفاق لغاری

ملتان، تھری وہیلر پائلٹ پراجیکٹ: بجلی سے چلنے والے 20 رکشوں پر مشتمل ایک کامیاب منصوبہ

thumb
سٹوری

موسموں کے بدلتے تیور کیا رنگ دکھائیں گے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceزبیر خان
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.