سندھ کی چھوٹی مکھی کو چھتے تک واپسی کا راستہ کون سجھائے گا؟

postImg

اشفاق لغاری

postImg

سندھ کی چھوٹی مکھی کو چھتے تک واپسی کا راستہ کون سجھائے گا؟

اشفاق لغاری

نثار احمد جتوئی منہ پھٹ ہیں۔ وہ بات کھل کر کرتے ہیں۔ وہ دریائے سندھ کے کنارے بینظیرآباد کی تحصیل قاضی احمد کے گاؤں دریا خان جتوئی میں کھیتی باڑی کرتے ہیں۔

اس برس انہوں نے تین ایکڑ پر گندم اور چار پر سرسوں کاشت کی ہے۔ وہ بتاتے ہیں کہ ایک زمانے میں سرسوں پر شہد کی دیسی چھوٹی مکھیاں بہت آیا کرتی تھی اور وہ بہار کے موسم میں شہد اتار کر بیچا کرتے تھے لیکن گزشتہ تین سال سے وہ یہ کام نہیں کر رہے۔

ان کا کہنا ہے کہ سرسوں پر دیسی چھوٹی مکھی تو اب تلاش کرنے پر بھی نہیں ملتی۔ "لوگ پالتو فارمی مکھیوں اور بڑی مکھیوں کے شہد کو بھی دیسی کا نام دے کر فروخت کر رہے ہیں، میں یہ جھوٹ اور دھوکے کا کاروبار نہیں کر سکتا"۔

دیسی مکھیاں ببول، نیم، دیوی اور پیپل جیسے درختوں پر اپنا چھتہ بناتی ہیں اور سرسوں، سورج مکھی، باجرہ، مکئی، برسیم اور لوسن کی فصلوں سے رس اٹھا کر شہد بناتی ہیں۔

نثار جتوئی محکمہ جنگلات پر سخت برہم ہیں۔ "درخت اور جنگلات تو یہ بیچ کر کھا گئے ہیں، یہ کیا شہد بچائیں گے۔ ان کو کھانا آتا ہے۔ یہ بچانے والوں میں سے نہیں"۔
"ان کو جب بجٹ ملتا ہے تو یہ (اصل کام کرنے کی بجائے) ہمیں یہ سکھانے آ جاتے ہیں کہ شہد کیسے اتارنا چاہیے۔ ارے بھائی، ہم نسلوں سے دریا کنارے آباد ہیں، ہم نے جنگلات میں عمر گزاری ہے، ہمیں پتا نہیں کہ شہد کیسے اتارا جاتا ہے؟"

شرجیل میمن محمکہ جنگلات سندھ میں نان ٹمبر فارسٹ پراڈکٹس کے ڈویژنل فاریسٹ آفسیر ہیں۔ وہ یہ تسلیم کرتے ہیں کہ جنگلات کی کٹائی کے باعث دیسی مکھیوں کی قدرتی آماجگاہوں کو نقصان پہنچا ہے اور "وہ یا تو مر گئی ہیں یا پھر ہجرت کر گئی ہیں"۔

  • پاکستان میں سالانہ 15 ہزار ٹن شہد پیدا ہوتا ہے
  • پاکستانی سالانہ 50 گرام فی کس شہد استعمال کرتے ہیں جبکہ عالمی اوسط 150 گرام فی کس ہے
  • پاکستان اپنی پیداوار کا چوتھائی سے کم حصہ ایکسپورٹ کرتا ہے جس میں سے زیادہ تر مشرق وسطیٰ جاتا ہے
  • پاکستان میں شہد کی سب سے بڑی ہول سیل مارکیٹ ترناب، پشاور میں ہے
  • 2020ء میں پاکستان میں 27 ہزار مگس بان (مکھیاں پالنے والے) تھے
  • پاکستان میں پیدا ہونے والے شہد میں سے 53 فیصد کیکر کا شہد ہوتا ہے اور 40 فیصد بیری/سدر کا

لیکن شرجیل میمن اس کا بڑا ذمہ دار زرعی ادویات کے بے دریغ استعمال کو قرار دیتے ہیں۔

نثار جتوئی بھی اس سے انکار نہیں کرتے۔ ان کی اپنی سرسوں کے فصل میں بیماری آ گئی تھی جو پودوں کو کھائے جا رہی تھی۔ انہوں نے بھی کیڑے مار زہریلی دوا کا سپرے استعمال کر کے اپنی فصل کو بچایا۔ 

فصل بچائیں یا شہد کی مکھیاں؟

پروفیسر ڈاکٹر عبدالغنی لنجار حشرات کے علم کے ماہر ہیں۔ وہ سندھ زرعی یونیورسٹی، ٹنڈو جام سے منسلک رہے ہیں۔ وہ بتاتے ہیں کہ فصلوں پر استعمال ہونے والی کیڑے مار ادویات دوست اور دشمن کیڑوں میں تمیز نہیں کر سکتیں۔ "یہ ادویات یا تو شہد کی مکھیوں کو مار دیتی ہیں یا اڑنے سے معذور کردیتی ہیں۔ بعض کیمیکل ان کی یاداشت کو متاثر کرتے ہیں اور وہ راستہ بھول جاتی ہیں اور اپنے چھتے تک واپس نہیں جا پاتیں"۔

ڈاکٹر لنجار اس بات کی بھی نشاندہی کرتے ہیں کہ مکھیوں کی بربادی سے صرف شہد کی پیداوار میں ہی کمی نہیں ہوتی بلکہ بہت سی دوسری فصلوں کی پیداوار بھی متاثر ہوتی ہے۔ ڈاکٹر صاحب بتاتے ہیں کہ قدرت نے پاکستان میں پیدا ہونے والی 61 فصلوں میں بارآوری (پولینیشن) کا عمل شہد کی مکھیوں کے ذمے رکھا ہے اور ان کی آبادی میں کمی اس عمل میں رکاوٹ پیدا کر رہی ہے۔ وہ مثال دیتے ہوئے کہتے ہیں کہ گلاب، موتیا، چنبیلی اور آبی نرگس میں پولینیشن کا 80 فیصد کام یہی مکھیاں انجام دیتی ہیں۔ "بہت سی فصلوں کے لیے پانی اور ہوا کے بعد یہ مکھیاں سب سے اہم ہیں۔" 

پولینیشن پھول کے نر دانوں کو مادہ انڈوں تک پہنچانے کے عمل کو کہا جاتا ہے جس کے بعد ہی وہ پھل دے سکتے ہیں۔

ڈاکٹر لنجار بتاتے ہیں کہ شہد کی جنگلی مکھیوں کا قدرتی مسکن تو جنگلات اور پہاڑی علاقے ہی ہیں لیکن انسانی ہاتھوں ان جگہوں کی تباہی کے باعث وہ زرعی علاقوں کی جانب ہجرت کر گئی ہیں۔ "بڑی مکھی تو اب بھی جنگلات میں ہی رہنے کو ترجیح دیتی ہے جبکہ چھوٹی مکھی نے انسانی آبادی کے قریب رہنا سیکھ لیا ہے تاہم اب زرعی ادویات کے بے تحاشا استعمال کے باعث وہ یہاں بھی غیر محفوظ ہے"۔

ڈاکٹر آفتاب احمد جروار نے دی گریجوئیٹ اسکول آف چائنیز اکیڈمی آف ایگریکلچرل سائنسز، بیجنگ سے 2019 میں ڈاکٹریٹ کی ہے اور اب وہ زرعی ادویات کی ایک کمپنی سے وابستہ ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ درست معلومات نہ ہونے کی وجہ سے کسان ضرورت سے زیادہ زہریلی ادویات استعمال کرتے ہیں جس سے فائدے کے بجائے نقصان ہوتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ عالمی ادارہ صحت نے زرعی ادویات کے کچھ گروپ مضر قرار دیے ہیں لیکن پاکستان میں کمپنیاں یہ ادویات بھی فروخت کر رہی ہیں جو شہد کی مکھیوں کے لیے مضر ثابت ہو رہی ہیں۔

مکمل بربادی سے کیسے بچایا جائے؟

فاریسٹ آفیسر شرجیل میمن جانتے ہیں کہ زرعی ادویات کے استعمال کو یکسر ترک نہیں کیا جا سکتا، وہ تجویز دیتے ہیں کہ ان کے استعمال کے طریقے میں تبدیلی کے ذریعے کچھ بہتری لائی جا سکتی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ادویات کا سپرے اگر دن کے بجائے رات کو کیا جائے تو شاید شہد کی مکھیاں کچھ محفوظ رہیں، کیونکہ رات کو وہ اپنے چھتے میں ہوتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

postImg

میٹھا میٹھا ہپ ہپ: شوگر ملیں گنے کی مٹھاس میں کمی بیشی کر کے کس طرح کاشت کاروں کو لوٹ رہی ہیں۔

اسی طرح ہنی بی ریسرچ انسٹیٹیوٹ کے سائنٹیفک آفیسر محمد خالد رفیق ملکہ مکھیوں کی حفاظت پر توجہ دے کر اس مسئلے کا حل چاہتے ہیں۔ یہ انسٹیٹیوٹ پاکستان ایگریکلچرل ریسرچ کونسل، اسلام آباد کا ذیلی ادارہ ہے۔

خالد رفیق شہد کی مکھیوں پر 33 تحقیقی مقالے لکھ چکے ہیں۔ انہوں نے لوک سجاگ کو بتایا کہ فروری سے اپریل تک سندھ میں ملکہ مکھی بننے کا موسم ہوتا ہے۔ مکھیوں کی آبادی میں کمی کو روکنے میں ملکہ مکھیوں کی حفاظت اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔ مکھیوں کی کالونی میں افزائش نسل کی ذمہ داری ملکہ مکھی کی ہوتی ہے۔

ان کے خیال میں 'شہد کے شکاری' بھی مکھیوں کی آبادی کو نقصان پہنچا رہے ہیں کیونکہ ان میں سے بہت سے اس کام کی باریکیوں سے یا تو ناواقف ہیں یا لاپرواہ ہیں۔

"پورے چھتے کو اکھاڑنے سے نقصان ہوتا ہے۔ پورا چھتا شکاریوں کے کام کا نہیں ہوتا۔ چھتے کے نچلے حصے میں ملکہ کے بچے ہوتے ہیں شہد چھتے کے اوپر والے حصے میں ہوتا ہے مگر لا علم اور نا تجربہ کار شکاری پورے چھتے کو ہی اکھیڑ لیتے ہیں۔"

ان اقدامت سے کچھ بہتری تو لائی جا سکتی ہے لیک زرعی ادویات کے بھاری استعمال کو کنٹرول کیے بغیر مکھی کی بحالی ایک ناممکن نہیں تو کٹھن کام ضرور ہے۔

خالد رفیق کے خیال میں شہد کی دیسی چھوٹی مکھی اب سندھ میں نایاب ہونے کے قریب ہیں۔

تاریخ اشاعت 31 جنوری 2023

آپ کو یہ رپورٹ کیسی لگی؟

author_image

اشفاق لغاری کا تعلق حیدرآباد سندھ سے ہے، وہ انسانی حقوق، پسماندہ طبقوں، ثقافت اور ماحولیات سے متعلق رپورٹنگ کرتے ہیں۔

thumb
سٹوری

بارشوں اور لینڈ سلائڈز سے خیبر پختونخوا میں زیادہ جانی نقصان کیوں ہوتا ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceعمر باچا

یہ پُل نہیں موت کا کنواں ہے

thumb
سٹوری

فیصل آباد زیادتی کیس: "شہر کے لوگ جینے نہیں دے رہے"

arrow

مزید پڑھیں

User Faceنعیم احمد
thumb
سٹوری

قانون تو بن گیا مگر ملزموں پر تشدد اور زیرِ حراست افراد کی ہلاکتیں کون روکے گا ؟

arrow

مزید پڑھیں

ماہ پارہ ذوالقدر

تھرپارکر: انسانوں کے علاج کے لیے درختوں کا قتل

thumb
سٹوری

"ہماری عید اس دن ہوتی ہے جب گھر میں کھانا بنتا ہے"

arrow

مزید پڑھیں

User Faceنعیم احمد

دریائے سوات: کُنڈی ڈالو تو کچرا نکلتا ہے

thumb
سٹوری

قصور کو کچرہ کنڈی بنانے میں کس کا قصور ہے؟

arrow

مزید پڑھیں

افضل انصاری
thumb
سٹوری

چڑیاں طوطے اور کوئل کہاں غائب ہو گئے ہیں؟

arrow

مزید پڑھیں

User Faceنادیہ نواز

گیت جو گائے نہ جا سکے: افغان گلوکارہ کی کہانی

جامعہ پشاور: ماحول دوست شٹل سروس

ارسا ترمیم 2024 اور سندھ کے پانیوں کی سیاست پر اس کے اثرات: غشرب شوکت

Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.
Copyright © 2024. loksujag. All rights reserved.